Insights into simplifying train travel

دیدار کریں پارس ناتھ کے مقدس پہاڑوں کا

دیدار کریں پارس ناتھ کے مقدس پہاڑوں کا

جین مذہب کے ایمان کی علامت- پارس ناتھ کے پہاڑوں کا سلسلہ جھارکھنڈ کے گريڈيه ضلع میں واقع پارس ناتھ کا پہاڑی سلسلہ جین مذہب کے عقیدتمندوں کے سب سے زیادہ مقدس مذہبی مقامات میں سے ایک ہے۔ پارس ناتھ کا دیداریعنی اس کے اونچے-اونچے پہاڑی سلسلہ کو دیکھنے کا لطف پارس ناتھ ریلوے اسٹیشن سے ہوکر گزرنے والی تقریبا تمام ٹرینوں سے لیا جا سکتا ہے۔ لمبی دوری کی تقریبا تمام ریل گاڑیاں جیسے کولکتہ راجدھانی ایکسپریس، پوری نئی دہلی پروشوتم ایکسپریس، ممبئی ہاوڑہ میل، احمد آباد-آسنسول پارس ناتھ ایکسپریس وغیرہ یہاں کافی دیر کے لئے ركتي ہیں۔ ہوڑہ سے دہلی کو ملانے والے راستے کو اس کا اصل راستہ کہا جا سکتا ہے۔ یہاں سب سے زیادہ اونچے پہاڑکی اونچائی 1350 میٹر ہے جو صرف جھارکھنڈ ریاست کا ہی نہیں بلکہ ہمالیہ کے جنوب میں پڑنے والا سب سے اونچا پہاڑ ہے۔ یہ پہاڑی مدھون نام کے جنگلوں سے گھری ہوئی ہے۔ ایمان کی علامت-

ایمان کی علامت

parasnath temple in hills

یہ  مقام جین عقیدتمندوں کے سب سے زیادہ مقدس مذہبی مقامات میں سے ایک ہے۔ جین مذہب کے لوگ اس جگہ کو ‘شری سممیتا جی’ کہتے ہیں۔ اس مقام کا نام 23 ویں تيرتھنكر پارس ناتھ کے نام پر رکھا گیا ہے۔ یہاں کے سب سے قدیم مندر پر 1775 عیسوی درج ہونے کی وجہ سے اس کو جینیوں کا سب سے قدیم مندر بھی کہا جاتا ہے۔ جینوں کے لئے پارس ناتھ وہ جگہ ہے جہاں ان کے24 میں سے 20 تيرتھنكروں نے عرفان حاصل کیا تھا۔ ماہرین کے مطابق یہاں واقع کچھ مندر 2000 سال سے بھی زیادہ قدیم ہیں۔ پارس ناتھ کی پہاڑیوں پر بنیادی طورسے سنتھال قبائلی رہائش کرتے ہیں۔ قبائلی طبقہ کے لوگ اس پہاڑی کو مرنگ برو دیوتا کے نام سے پوجتے ہے۔

سموشرن مندر اور بھوميا جی ہے انتہائی مشہور

samosharan shikharji templeوسط اپریل میں بیساکھی کے دوران پورے پورنیما کی رات کو ہر سال مقامی سنتھال قبائلی یہاں شکار جشن بھی مناتے ہیں۔ اس کے علاوہ یہاں جین مذہب سے جڑے کئی مندر واقع ہیں جو جدید طور پر بنائے گئے ہیں۔ سموشرن مندر اور بھوميا جی مقام یہاں کافی مشہور ہے۔ وہی مدھون ہاؤس میں واقع جین میوزیم میں آپ جین مذہب سے جڑی کئی مورتیاں، مخطوطات وغیرہ بھی دیکھ سکتے ہیں۔ میوزیم میں واقع دوربین کی مدد سے بھی پارس ناتھ مندر کو واضح طور پر دیکھا جا سکتا ہے۔ مدھون سے صرف 3.5 کلومیٹر کے فاصلے پر بہنے والی گندھرو ندی اور سیتا ندی بھی اس جگہ کی خوبصورتی میں چار چاند لگاتے ہے۔ جین عقیدت مند گندھرو ندی سے لے کر ‘شری سممیتا جی’ تک کے راستے کو انتہائی مقدس مقام سمجھتے ہیں۔

سیاحتی مقام کے طور پر بھی ہے مشہور

sita at parasnath hills

مذہب کے علاوہ سیاحت کے لحاظ سے بھی یہ مقام بہت اہم ہے۔ ٹریکنگ میں دلچسپی رکھنے والے سیاحوں کو مدھون سے شروعات کرنی ہوتی ہے۔ حالانکہ پہاڑ کے اوپر کی سمت سے آسانی سے کوہ پیمائی کی جا سکتی ہے۔ کوہ پیمائی کے لئے سیاحوں کو کل 27 کلومیٹر کی دوری طے کرنی پڑتی ہے۔ پہاڑ پر نہیں چڑھ پانے والے سیاحوں کو ڈولی والوں سے رقم چکا کر سروس لینی پڑتی ہے۔ چڑھنے کے وقت سیاحوں کے پاس ٹارچ کا ہونا ضروری ہے۔ سیاح راستے میں پڑنے والی دکانوں سے چائے، کافی، انرجی ڈرنک وغیرہ خرید سکتے ہیں ہیں۔ پارس ناتھ کی اہم پہاڑی سے پہلے سیاحوں کی دلچسپی دو دیگر پہاڑ گوتم مالک اور چندر پربھو پہاڑی کو دیکھنے کی ہوتی ہے۔

پکنک کے لئے ہے شاندار جگه

gandharv river at parasnath hills
ریاستی حکومت کے ذریعہ سیاحت کو فروغ دینے کے لئے کئی اسکیمیں شروع کرنے پر غور ہو رہا ہے جس میں، پیرا گلائڈنگ اور پیراسیلنگ کے کھیل کی شروعات اہم ہے۔
مقامی لوگ اکثر یہاں پکنک منانے کے لئے بھی آتے ہیں۔ اکتوبر سے مارچ کے درمیان کاوقت سیاحت کے لحاظ سے سب سے زیادہ مناسب ہے۔ حالانکہ یہاں گوشت الکحل کا استعمال مکمل طور ممنوع ہے۔

کہاں ٹھہریں
سیاحوں کے رہنے کے لئے قریب کا اسري نامی جگہ میں کئی جین دھرمشالائیں اور ایک ڈاک بنگلہ واقع ہے۔


Leave a Comment

Required fields are marked *