Insights into simplifying train travel

ماضی کی ایک جھلک: چاندنی چوک کے گھنٹے والا کا ایک سنہری باب

ghantewala-1

پرانی دہلی کی تنگ گلیاں اور ان میں بکھری ہوئی خوشبوئیں،دلچسپی پیدا کرتی ہیں۔ یہاں یونیسکو ثقافتی ورثہ کا درجہ نہ ہونے کے باوجود اس شہر کی پکوان فن کا ثقافتی ورثہ کو بخوبی یاد کیا جا سکتا ہے۔ ان میں گھنٹےوالا بھی ایک تھا، چاندنی چوک میں مٹھائی کی ایک تاریخی دکان۔

مٹھائی کی اس کی دکان، جو حال ہی میں اس سال بند ہو گئی، یہ 225 سال کے اپنی زندگی کے دوران عالمی سطح کی اور بھارت میں کئی اہم واقعات کی خاموش گواہ رہی ہے۔ گھنٹےوالا کا قیام 1790 میں میں عمل میں آیا تھا، جب مٹھائی بنانے والے ایک چھوٹے کاروباری، راجستھان کے لالہ سکھ لال جین ذریعہ معاش کی تلاش میں دہلی آئے تھے۔ کہا جاتا ہے کہ وہ سب سے مخصوص قسم کی لذیذ مٹھائیاں بنانے کے فن میں ماہر تھے، جن میں سب سے بہترینمرکب کا استعمال کیا جاتا تھا۔ ان کی شہرت بڑھتی گئی اور پیسہ اکٹھا ہوتے جانے کے ساتھ انہوں نے چاندنی چوک کی بھيڑبھرے مین سڑک پر ایک دکان قائم کی۔ اپنے سوہن حلوہ (عمدہ آٹے، چینی، گريوں اور  دیسیگھی سے بنا) کے لئے انہیں کافی شہرت ملی، جو کہ ان کی بنائی ایسی کئی مٹھائیوں میں سے ایک تھی جنہیں شہنشاہ سے لے کر عام آدمی تک کا پیار ملا۔

ghantewala-2

گھنٹےوالا محض مٹھائی کی دکان ہی نہیں تھی، یہ ایک پتہ، ایک منزل ہوا کرتا تھا۔ اسے گھنٹےوالا کیوں کہا جاتا تھا، اسے لے کرمشہور کئی داستانوں میں سے ایک یہ بھی ہے کہ شہنشاہ کو عزیز ہاتھی، دکان سے مٹھائیاں کھانے کے لئے دکان کے باہر لگا گھنٹے بجایا کرتا تھا، یا شہنشاہ دکان کے قریب لال قلعہ اسکول کے گھنٹے سن سکتا تھا۔گھنٹےوالا نے 1857 کے باغیوں کوخدمات دی، جو اس دکان کی مٹھائیوں کے ذائقہ سے لطف اندوزہو تے تھے۔ اس کے علاوہ، گھنٹےوالا کے گاہکوں میں وزیر اعظم، صدر، جانی مانی ہستیاںاور کئی غیر ملکی سیاح بھی شامل ہیں۔

کھانے پینے کے گلوبلائزیشن کے دور میں ماضی کاایک قیمتی نگینہ گم ہو گیا ہے۔ اس دکان کا بند ہو جانا، اس شہر کی وراثت کو کچھ دھندلاکر دیتا ہے-وہ وراثت جو فخر کرنے کے قابل تھا اور ہے۔ تاریخ کے اس باب کا شاید اختتام ہو گیا ہے، لیکن اس 200 سال سے زیادہ مدت کی مٹھاس ہندوستان کا ثقافتی ورثہ اور ثقافت میں اپنا مخصوص مقام ہمیشہ برقرار رکھے گا۔


Leave a Comment

Required fields are marked *