Insights into simplifying train travel

بھان گڑھ سے بھی بڑھ کر: راجستھان کے کم معروف آسیب زدہ مقامات

راجستھان، جو اپنے ورثہ جاتی محلوں، قلعوں اور رنگا رنگ ثقافت کے لئے جانا جاتا ہے، میں کئی ایسے پر اسرار مقامات بھی ہیں جہاں پر آسیبی واقعات رونما ہو چکے ہیں۔ اگر آپ کو بھوتوں والی ڈراؤنی کہانیاں پسند ہیں، تو ہم درج ذیل میں راجستھان کے بعض ان آسیب زدہ مقامات کی فہرست دے رہے ہیں جن کے بارے میں آپ نے اب تک نہیں سنا ہوگا۔

کُل دھارا

Kuldhara

یہ متروکہ گاؤں جیسلمیر سے تقریبا 17 کلومیٹر کی دوری پر واقع ہے۔ بشمول کُل دھارا، آس پاس تقریبا 84 گاؤں ہیں جہاں کوئی انسان نہیں بستا ہے۔ مقامی لوگوں کے مطابق، ریاست کا ایک سابق وزیر ظالم سنگھ اس گاؤں کے مکھیا کی حسین بیٹی سے شادی کرنا چاہتا تھا۔ لیکن سماج نے اس کی مخالفت کی۔ انتقام کے طور پر، ظالم سنگھ نے گاؤں والوں کو ستانا شروع کر دیا۔ اس نے ان کا لگان بڑھا دیا۔ تب گاؤں والوں نے فیصلہ کیا کہ وہ گاؤں ہی چھوڑ دیں گے۔ وہاں سے جاتے ہوئے، گاؤں والوں نے گاؤں کے لئے بد دعا کی، اور تب سے وہاں کوئی دوبارہ بسنے نہیں آیا۔

قریب ترین ریلوے اسٹیشن: جیسلمیر

جگت پورا

Jagatpura

جگت پورا جے پور میں ایک رہائشی علاقہ ہے۔ یہاں گھومنے آنے والوں میں سے بہت سے لوگوں نے کچھ غیر فطری واقعات کا مشاہدہ کیا ہے، ایسا خاص کر رات کے اوقات میں ہوا ہے۔ کئی سال پہلے، جگت پورا کے راجہ نے (جو ایک لالچی اور خود غرض انسان تھا) گاؤں والوں کے ساتھ برا برتاؤ کرنا شروع کر دیا۔ اس کے عہد حکومت میں بہت سارے لوگ شدید بھوک کی وجہ سے مر گئے اور مرتے وقت ان لوگوں نے اس کو بد دعا دی۔ جن لوگوں نے اندھیرا پھیلنے کے بعد جگت پورا کا دورہ کیا ہے انہیں وہاں پر سفید کپڑوں میں ملبوس پر اسرار عورتیں دکھائی دی ہیں جو ہوا میں غائب ہو جاتی ہیں۔ اسی طرح وہاں پر ان کو ڈراؤنی آوازیں بھی سنائی دی ہیں۔

قریب ترین ریلوے اسٹیشن: جے پور

رانا کمبھ محل

Rana Kumbha Palace

یہ ورثہ جاتی محل چتوڑ گڑھ میں واقع ہے اور اس کو راجستھان کے چند سب سے زیادہ ڈراؤنے قلعوں میں شمار کیا جاتا ہے۔ یہاں آنے والے بیشتر سیاحوں کے مطابق، اگر آپ اس طرح کی ہدایات مثلا “جس جگہ پر رانی پدمنی اور 700 سے زائد دیگر عورتوں نے اجتماعی خود کشی (جوہر) کر کے اپنی جان کی قربانی دی تھی، وہاں آگ نہ جلائیں” کی پابندی نہیں کرتے ہیں، تو اس بات کا قوی امکان ہے کہ آپ کو یہاں بھوت نظر آئیں۔ کہانی کچھ یوں ہے کہ رانی پدمنی کے حسن کے بارے میں سن کر دہلی کے بادشاہ علاء الدین خلجی نے چتوڑ گڑھ پر حملہ کیا۔ شکست ہوتی دیکھ کر بہادر راجپوت عورتوں نے مسلم حملہ آوروں سے اپنی عزت وناموس کی حفاظت کر نے کے لئے “جوہر” (خود کشی) کر لیا۔ مقامی لوگوں کا عقیدہ ہے کہ ان بہادر راجپوت عورتوں کی روحیں اب بھی اس محل میں گھومتی ہیں اور مدد کے لئے ان کے چیخ وپکار کی آوازیں سنائی دیتی ہیں۔ یہ بھی دعوی کیا جاتا ہے کہ اگر کوئی ان آوازوں کا جواب دینے کے لئے پیچھے مڑتا ہے تو اس کو جلے ہوئے چہرے والی ایک شاہی عورت دکھائی دیتی ہے۔

قریب ترین ریلوے اسٹیشن: چتوڑ گڑھ

برج راج بھون

Brij Raj Bhawan

برج راج بھون کوٹہ میں 178 سال پرانا ایک محل ہے۔ یہ کوٹہ کے سابق حکمرانوں کا رہائشی محل تھا، بعد میں یہ (انگریزی حکومت کے ملازم) میجر برٹن کی رہائشگاہ بنا۔ 1857 کی بغاوت کے دوران، ہندوستانی فوجیوں نے اس کو اور اس کے اہل خانہ کو قتل کر دیا۔ لوگوں کا عقیدہ ہے کہ ایک برطانوی افسر اور اس کے بیٹے کے بھوت اس محل میں اب بھی دکھائی پڑتے ہیں۔ برج راج بھون کو اب ایک ورثہ جاتی ہوٹل بنا دیا گیا ہے، اور یہاں پر پائے جانے والے بھوت سیکیورٹی گارڈ کو ڈیوٹی کے دوران سوتا ہوا دیکھ کر تھپڑ مارتے ہیں۔

قریب ترین ریلوے اسٹیشن: کوٹہ

این ایچ 79، دودو

NH-79 Road

اجمیر اور ادے پور کو جوڑنے والے نیشنل ہائی وے 79 پر سفر کرنے والوں میں سے بہت سے لوگوں نے ایک عورت کو دیکھا ہے جو گود میں ایک بچہ لئے ہوئے لوگوں سے لفٹ مانگتی رہتی ہے۔ مقامی لوگوں کے مطابق ایک 5 دن کی بچی کی شادی ایک 3 سال کے لڑکے کے ساتھ طے کی گئی تھی، لیکن اس بچی کی ماں اس شادی کے خلاف تھی اور اسی لئے اپنی بچی کو بچانے کی خاطر وہ گھر سے بھاگ گئی۔ ہائی وے پار کرتے ہوئے وہ ایک حادثہ کا شکار ہو گئی جس میں وہ اور اس کی بچی فوت ہو گئی۔ اس کے بعد سے ہی ہائی وے پر گود میں بچہ لئے ایک عورت نظر آنے لگی۔


Leave a Comment

Required fields are marked *