Insights into simplifying train travel

مذہب اور تاریخ کے گواہ برابر کے پہاڑ

ویسے تو پورے ملک میں کئی قدیم شیو مندر ہیں۔ لیکن جب بات قدیم شیو مندر کی ہو تو مگدھ کے برابر پہاڑ پر واقع سدھیشور ناتھ مہادیو مندر کا نام سب سے پہلے آتا ہے۔ اسے سدھناتھ تیرتھ کے طور پر بھی جانا جاتا ہے۔ مہابھارت دورکے متحرک کرتیوں میں سے ایک یہ مندر آج بھی قدیمی ہینڈی کرافٹ میں اعلی قدیم نظریات پر مشتمل پوجن روایت کو زندہ رکھے ہوئے ہے۔ برابر پہاڑ کی چوٹی پر واقع سدھیشورناتھ کو نو خود ساختہ ناتھوں میں پہلا کہا جاتا ہے۔ ان پوجن کہانی شیوبھكت واناسُر سے متعلق ہونے کی وجہ سے اسے ‘وانیشور مہادیو بھی کہا جاتا ہے۔ مندر تک جانے کے لئے سيڑھياں بھی بنی ہوئی ہیں۔

برابر پہاڑ ہندوستان کے قدیمی تاریخی پہاڑوں میں ایک ہے۔ 1100 فٹ بلند برابر پہاڑ کو مگدھ کا ہمالیہ بھی کہا جاتا ہے۔ یہاں سات حیرت انگیز غاریں بھی بنی ہوئی ہے۔ جن کا پتہ انگریزوں کے دور میں چلا۔ ان میں سے چار غاریں برابر غاریں اور باقی تین ناگارجن غاریں کہلاتی ہیں۔ بھارت میں پہاڑوں کو کاٹ کر بنائی گئی یہ سب سے قدیم غاریں ہے۔ سیاحت کے لحاظ سے بھی یہ بہت مناسب جگہ ہے۔یہ پہاڑ سدا بہارسیر گاہ کے طور پر قدیم زمانے سے مشہور ہے۔ کنودنتیوں کے مطابق پہاڑ پر بنی غاریں قدیم دور میں رشی-منيوں کے مراقبہ لگانے کیلئے تحفظ کے نقطہ نظر سے بنائی گئی تھی۔

one-of-the-barabar-caves

گیا-جہان آباد سرحد پر اشوك کے دورکی غاروں میں کرن چیمپر غار، سداما غار، لومس رشی غار، ناگارجن غار سمیت سات غاریں ہیں۔ واضح رہے کہ کرن چیمپر، سداما اور لومس رشی غار ایک ہی چٹان کو کاٹ کر بنائی گئی ہیں۔ دیکھنے میں حیرت انگیز لگنے والی یہ غاریں قدیم زمانہ کی فنکاری کی عکاسی کرتی ہیں۔ غار کے اندر اندر تیز آواز میں چلانے پر کافی دیر تک باز گشت کو سن کر آنے والے سیاح کافی دلچسپی لیتے ہیں۔

سداما غار

Barabar Sudama caveسداما غار کی تعمیر سمراٹ اشوک نے اپنے تاجپوشی کے بارہویں سال میں آجيوك سادھوؤں کے لئے بنوایا تھا۔ اس غار میں ایک چوکور خیمہ کے ساتھ گول محراب نما کمرہ بنا ہوا ہے۔

لومس غار

lomas Cave لومس رشی کی مشہور غار کی تعمیر بھی اشوک نے  کیا تھا۔  ان غاروں کی تعمیر مشر انداز میں کیا گیا ہے اور اس وقت کے بھارتی کاریگروں کی شاندار فنکاری اور تعمیراتی مہارت کا مظہر ہے۔  محراب کی طرح کے سائز والے رشی غاریں لکڑی کی معاصر فن تعمیر کے طور پر ہیں۔  دروازے کے راستے پر ہاتھیوں کی ایک قطار استوپ  کی شکلوں کی جانب مڑے ہوئے دروازے کے ڈھانچے کے ساتھ آگے بڑھتی ہے۔  یہاں کئی غاروں کے اندر بھی غاریں ہے جہاں تک پہنچنا بہت مشکل ہے۔

کرن چیمپر غار

Vadathika caveیہاں موجود کرن چیمپر غار کو سپریا غار بھی کہا جاتا تھا۔  اشوک نے اپنے تاجپوشی کے 19 ویں سال میں اس کی تعمیر کرائی تھی۔ اس وقت کے کنندہ پتھر آج بھی یہاں موجود ہیں۔ کنندہ پتھروں کے مطابق اس پہاڑی کو سلاٹیكا کے نام سے بھی جانا جاتا تھا۔ ان غاروں کی تعمیر بھی مرکب اسٹائل سے کیا گیا ہے۔  یہاں ہموار سطحوں کے ساتھ ایک واحد چوکور کمرے کا شکل بنا ہوا ہے۔

واپك غار

Vapiyaka caveپہاڑ کے تاریخی سپت غاروں میں بنی واپك غار میں درج حقائق سے معلوم ہوتا ہے کہ اس کی تنصیب يوگانند نامی برہمن نے کی تھی۔  مندر احاطہ میں پاشان كھڑوں پر کی گئی کندہ آرٹ ورک اس پورے علاقے کو قدیم شیو ارادھنا علاقہ کے طور پر قائم کرتی ہے۔  ایک اور خیال کے مطابق قدیم زمانہ میں کول فرقے کا مگدھ پر جو تسلط تھا، اس کا مرکز اسی پہاڑ کو بتایا جاتا ہے۔ اس کی پیدائش قبل مسیح 600 کے تقریبا مانی جاتی ہے۔  انہیں دشرتھ  کے ذریعہ روزی روٹی کے پیروکاروں کے لئے وقف کیا گیا تھا۔

عالمی جوپري
عالمی جوپري غار میں دو چوکور کمرے موجود ہیں جہاں چٹانوں کو کاٹ کر بنائی گئی اشوکا سیڑھیوں کے ذریعہ پہنچا جا سکتا ہے۔


ناگارجني غاریں
ناگارجن کے آس پاس کی غاریں برابر غاروں سے چھوٹی اور نئی ہیں۔


گوپيكا غار اور واپيا کا غار تقریبا 232 قبل مسیح میں راجہ دشرتھ کےذریعہ آجیویکا فرقے کے پیروکاروں کے لئے وقف کی گئی تھی۔

Gopika Caveبرابر پہاڑ میں واقع ان غاروں کو ہندوستانی آثار قدیمہ سروے کے ذریعہ محفوظ علاقہ قرار دیا گیا ہے۔  جس بڑی چٹان کو کھود کر غاریں بنائی گئی ہیں اس پر لوگوں کا آمدورفت رہتا ہے۔ اکثر سیاح یہاں پکنک منانے آتے ہیں۔  ویسے یہاں سالوں بھر عقیدت مند اور سیاح آتے رہتے ہیں لیکن شراون ماس، بسنت پنچمی اور مهاشوراتري انت چتدردشي میں عقیدت مندوں اور سیاحوں کی آمد بڑی تعداد میں ہوتی ہے۔

Originally Written in Hindi by Akshoy Kumar Singh


Leave a Comment

Required fields are marked *